Search This Blog

Loading...

السلام علیکم ورحمة الله وبرکاته ډېرخوشحال شوم چی تاسی هډاوال ويب ګورۍ الله دی اجرونه درکړي هډاوال ويب پیغام لسانی اوژبنيز او قومي تعصب د بربادۍ لاره ده


اَلسَّلَامُ عَلَيْكُمْ وَرَحْمَةُ اللهِ وَبَرَكَا تُهُ




اللهم لك الحمد حتى ترضى و لك الحمد إذا رضيت و لك الحمد بعد الرضى



لاندې لینک مو زموږ دفیسبوک پاڼې ته رسولی شي

هډه وال وېب

https://www.facebook.com/hadawal.org


د عربی ژبی زده کړه arabic language learning

https://www.facebook.com/arabic.anguage.learning
There was an error in this gadget

Thursday, March 31, 2011

عورت کا حقیقی حُسن ''' حیاء

::::: عورت کا حقیقی حُسن ''' حیاء ''' :::::

بِسّمِ اللہ الرّ حمٰنِ الرَّحیم
اِنَّ اَلحَمدَ لِلِّہِ نَحمَدہ، وَ نَستَعِینہ، وَ نَستَغفِرہ، وَ نَعَوذ بَاللَّہِ مِن شَرورِ أنفسِنَا وَ مِن سِیَّأاتِ أعمَالِنَا ، مَن یَھدِ ہ اللَّہُ فَلا مُضِلَّ لَہ ُ وَ مَن یُضلِل ؛ فَلا ھَاديَ لَہ ُ، وَ أشھَد أن لا إِلٰہَ إِلَّا اللَّہ وَحدَہ لا شَرِیکَ لَہ ، وَ أشھَد أن مُحمَداً عَبدہ، وَ رَسو لہ،:::بے شک خالص تعریف اللہ کے لیے ہے ، ہم اُس کی ہی تعریف کرتے ہیں اور اُس سے ہی مدد طلب کرتے ہیں اور اُس سے ہی مغفرت طلب کرتے ہیں اور اللہ کی پناہ طلب کرتے ہیں اپنی جانوں کی بُرائی سے اور اپنے گندے کاموں سے ، جِسے اللہ ہدایت دیتا ہے اُسے کوئی گمراہ نہیں کر سکتا ، اور جِسے اللہ گُمراہ کرتا ہے اُسے کوئی ہدایت دینے والا نہیں ، اور میں گواہی دیتا ہوں کہ بے شک اللہ کے عِلاوہ کوئی سچا اور حقیقی معبود نہیں اور وہ اکیلا ہے اُس کا کوئی شریک نہیں ، اور میں گواہی دیتا ہوں کہ بے شک محمد اللہ کے بندے اور اُس کے رسول ہیں :
اکیلے خالق اللہ تبارک و تعالیٰ نے اپنی سب سے زیادہ بزرگی اور عِزت والی مخلوق اِنسان کی فطرت میں ایک ایسی صِفت عطاء فرمائی ہے جو یقینی طور پر خیر کا سبب بنتی ہے، جسے اللہ سبحانہ و تعالیٰ کے رسول کریم صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم نے اِیمان کا حصہ قرار دیا ہے ((((( الإِیمَانُ بِضعٌ وَسِتُّونَ شُعبَۃً وَالحَیَاء ُ شُعبَۃٌ من الإِیمَانِ ::: حیاء اِیمان کے حصوں میں سے ایک حصہ ہے ))))) صحیح البُخاری /حدیث 9/ کتاب الاِیمان /باب 2 ، صحیح مُسلم حدیث 35/کتاب الاِیمان/باب 12 سنن ابن ماجہ/ حدیث 58 / (9)باب فی الاِیمان، سنن النسائی /کتاب الاِیمان و شرائعہ/(باب) 16 ذکرُ شُعب الاِیمان، میں صرف آخری جز مروی ہے ،
جی ہاں ، یہ صِفت حیاء ہے جو اِیمان کی کمزوری کے ساتھ کم ہوتی ہے اور اِیمان کے بڑہنے سے بڑہتی ہے ، پس کسی میں پائی جانے والی حیاء سے اُس کے اِیمان کا قوت و منزلت کا اندازہ ہو سکتا ہے ، جیسا کہ سب سے اعلیٰ ترین اور مکمل ترین اِیمان والے ، ہمارے نبی صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی حیاء کے بارے میں ابو سعید الخُدری رضی اللہ عنہُ کا فرمان ہے کہ ((((( کانِ رَسُول اللَّہِ عَلیہِ و عَلی آلہِ وَسلَّم أشدَّ حَیائً مِن العَذراءِ فی خِدرِھَا ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم اپنی چادر میں لپٹی ہوئی کسی کنواری سے زیادہ حیاء والے تھے ))))) صحیح البُخاری /کتاب الادب / باب 77 ، صحیح مُسلم /کتاب الفضائل / باب 16 ،
اور جیسا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی پاکیزہ بیوی اِیمان والوں کی والدہ محترمہ عائشہ رضی اللہ عنہا بتاتی ہیں کہ '''''' ایک دفعہ اُن کی بہن أسماء بنت ابی بکر رضی اللہ عنہم جمعیاً اُن کے حجرہ میں داخل ہوئیں اور انہوں نے باریک لباس پہن رکھا تھا تو ((((( رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم نے ان کی طرف سے چہرہ مُبارک پھیر لیا ))))) اور اِرشاد فرمایا ((((( یا أَسمَاء ُ إِنَّ المَرأَۃَ إذا بَلَغَت المَحِیضَ لم تَصلُح أَن یری منہا إلا ہذا وَہَذَا وَأَشَارَ إلی وَجہِہِ وَکَفَّیہِ ::: اے أسماء جب عورت بالغ ہو جائے تو اس کے لیے حلال نہیں کہ ُاس میں سے کچھ نظر آئے ، سوائے اس کے اور اس کے ، اور(یہ فرما کر) اپنے چہرہ مُبارک اور اپنی دونوں ہتھیلیوں کی طرف اِشارہ فرمایا ))))) سنن ابو داؤد /حدیث 4104/ کتاب اللباس/ باب33، اِمام الالبانی نے صحیح قرار دیا،
اللہ کی عطاء کردہ اس صفت میں اور بہت سی صفات ہیں ، یعنی یہ ایک صفت انہی جگہ صفات کا مجموعہ ہے ، اور اس میں پائی جانے والی صفات میں سے سب سے أہم یہ ہے کہ حیاء کسی بھی اِیمان والے کو بخوشی اُس کی نظر کی حفاظت کرنے پر مجبور کرتی ہے اور اُس سے کہیں زیادہ کسی بھی اِیمان والی کوبا رضا و رغبت اُس کی نظر اور ساتھ ہی ساتھ ستر وحجاب یعنی پردہ داری اور پردے پر قائم رکھتی ہے ، وہ پردہ داری اور وہ پردہ جو اللہ نے اُس اِیمان والی پر فرض کر رکھا ہے ،

جب شرم و حیاء مردوں میں ایک اچھی تعریف کی گئی صفت سمجھی جاتی ہے تو عورتوں میں اس صفت کا ہونا کہیں زیادہ ستائش و تعریف والا ہے ، کیونکہ عورت کا دائمی اور ہمیشہ اور ہر کسی کو اس کی جگہ اور مُقام کے مطابق مرعوب اور جذب کرنے والا حُسن وہ ہے جو اُس عورت کے باطن میں موجود اِیمان سے منعکس ہو کر ظاہر ہوتا ہے ، شاید اسی لیے کہا جاتا ہے کہ ''''''' عورت کا حُسن اُس کی حیاء میں ہے '''''''

اور واقعتا یہ ہے بھی حقیقت ، ایسی حقیقت جس کا انکار کوئی عقل کا مارا ، شہوت رانی کا شکار ، غیرت و حیاء سے عاری ہی کر سکتا ہے ، جس کے معیار اللہ کی عطاء کردہ صفات کے مطابق نہ رہے ہوں ، اللہ اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی مقرر کردہ اور پسندیدہ صفات کے مطابق رہے ہوں ، پس وہ عورت کی بے پردگی اور بے حیائی کو حُسن سمجھتا ہے اور اُس کے حصول کی کوشش میں اپنی آخرت کی یقینی ذلت اور تباہی کما لیتا اور بسا اوقات دُنیا کی بھی ، اللہ ہر مُسلمان کو ہر گمراہی سے محفوظ رہنے کی توفیق عطاء فرمائے ،

اِیمان والیوں کو اُن کے مالک اور خالق اللہ تبارک و تعالیٰ نے اپنی طرف سے عطاء کردہ اس بہترین اور پسندیدہ صفت ''' حیاء ''' کے عین مطابق اور اس کے عملی مفہوم و مطلوب کو اپنے کلام میں اِیمان والیوں کے انداز و اطوار اور اُن کے لباس کی حدود مقرر کرتے ہوئے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کو یہ فرمانے کا حُکم دیتے ہوئے یوںبیان فرمایا کہ ((((( وَقُل لِّلمُؤمِنَاتِ یَغضُضنَ مِن أَبصَارِہِنَّ وَیَحفَظنَ فُرُوجَہُنَّ وَلَا یُبدِینَ زِینَتَہُنَّ إِلَّا مَا ظَہَرَ مِنہَا وَلیَضرِبنَ بِخُمُرِہِنَّ عَلَی جُیُوبِہِنَّ::: اے رسول (صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم ) آپ اِیمان والی عورتوں کو فرما دیجیے کہ وہ اپنی نگاہیں جُھکائے رکھیں اور اپنی شرمگاہوں کی حفاظت کریںاور وہ (اِیمان والیاں ) اپنی زینت (خود سے )ظاہر مت کریں ہاں جو (بلا اِرادہ )ظاہر ہو جائے (تو اس پر گناہ نہیں)اور ضروراپنی چادروں کو(صرف سروں پر ہی نہ رکھیں بلکہ) اپنے سینوں پر لیپٹ لیا کریں ))))) غور فرمایے ، اللہ سبحانہُ و تعالیٰ نے یہ نہیں فرمایا کہ ''''' وَلَیَتَخذِنَّ خِماراً ::: اور وہ (اِیمان والیاں ) ضرور چادریں لیا کریں ''''' کیونکہ صرف چادر لینا حیاء کا وہ فطری تقاضا پورا نہیں کرتا جس کے مطابق اُسے بنایا گیا ، بلکہ وہ تقاضا چادر کو اس طرح ڈھیلے پن کے ساتھ لیپٹنے سے پورا ہوتا ہے کہ عورت کے جسم کے نشیب و فراز ظاہر نہ ہوں ، اور تقاضا ہے پردہ کرنا ، یعنی خود کو چُھپائے سِمٹائے رکھنا ہی عورت کی '''حیاء ''' کا اصل عملی مفہوم اور تقاضا ہے ، اب اگر اس کو پورا کرتے ہوئے کِسی اِیمان والی سے اپنی مرضی اور اختیار کے بغیر کچھ ظاہر ہو جائے تو وہ بے حیائی نہیں ،
عورت کی '''حیاء ''' کا یہ مذکورہ بالا تقاضا ، یہ اساسی عملی مفہوم اور مطلوب ، اور اُس میں سے یہ استثناء کسی مخلوق کی پرواز ء عقل کا شاخسانہ نہیں بلکہ خالق واحد و حقیقی اللہ تبارک و تعالیٰ کی مکمل اور بے عیب حِکمت میں سے ہے ، جیسا کہ اُس نے اپنے( مذکورہ بالا ) فرمان کے آغاز میں اِرشاد فرمایا ((((( وَلا یُبدِینَ زِینَتَھُنِّ اِلِّا مَا ظَھَرَمِنھا::: اور نہ ہی وہ (اِیمان والیاں ) اپنی زینت (خود سے )ظاہر کریں ہاں جو (بلا اِرادہ )ظاہر ہو جائے )))))
پھر اسی ''' حیاء ''' کا وہ مُقام بھی بیان فرمایا جہاں اگر اسے اسی طور برقرار رکھا جائے تو وہ فائدہ کی بجائے نقصان کا باعث ہوتا ہے ، پس وہاں بھی اس ''' حیاء ''' سے رخصت عطاء فرماتے ہوئے اِرشاد فرمایا ((((( و لا یُبدِینَ زِینَتَھُنَّ اِلاَّ لِبُعُولتِھِنَّ أو آبَائِہِنَّ أَو آبَاء بُعُولَتِہِنَّ أَو أَبنَائِہِنَّ ،،،،،،، ::: اور (اِیمان والیاں) اپنی زینت کسی کے سامنے ظاہر نہ کریں سوائے اپنے خاوندوں کے یا اپنے باپوں کے یا اپنے سُسروں پر یا اپنے بیٹوں پر ،،،،،،،))))) سورت النور / آیت31 ،
اللہ تعالیٰ کے ان فرامین سے صاف طور پر یہ واضح ہوتا ہے کہ عورت کی ''' حیاء ''' کی اساس اور اصل حکمت اُسکا پردہ ہے اُسکا ڈھکا چُھپا رہنا ہے ،
کیونکہ اللہ تعالیٰ نے پردے کے ان احکامات کے آغاز میں اس بات کا حکم دیا کہ عورت اپنے آپ اور اپنی زیب و زینت کو کس طور ڈھانپ اور چُھپا کر رکھے ، اور پھر اُس حُکم میں سے خاوند اور دیگر کچھ رشتہ دار مردوں کے سامنے ہونے اور ان سے ،ملنے جلنے کے بارے میں کچھ محدود رُخصت عطاء فرمانے کے بعد پھر اُسی اصل کی طرف واپس لاتے ہوئے مزید حُکم فرمایا ((((( وَلَا یَضرِبنَ بِأَرجُلِہِنَّ لِیُعلَمَ مَا یُخفِینَ مِن زِینَتِہِنَّ ::: اور (اِیمان والیاں) اپنے پاؤں بھی زور سے مت ماریں تا کہ اُن کی چُھپی ہوئی زینت ظاہر ہو )))))
یعنی اس بات کی بھی اجازت نہیں دی گئی کہ اِیمان والی عورت اپنے پاؤں کو ہی اس لیے زور سے زمین پر رکھے یا مارے کہ اُس کی پازیب وغیرہ کی آواز ظاہر ہو اور کوئی غیر مرد اُس کی طرف متوجہ ہو ، سُبحان اللہ ، اِس آیت مبارکہ میں اللہ تعالیٰ نے عورت کے پاؤں کے زیور ، بلکہ اُس سے نکلنے والی آواز کو بھی چُھپائے رکھنے کا حُکم دیا ، اِن احکامات کو وہی دِل و دِماغ بخوشی قبول کرتا ہے جس میں اِیمان کی روشنی ہو گی ، اور جتنی زیادہ یہ روشنی ہو گی اتنا ہی زیادہ اِن احکامات پر عمل ہو گا اور جتنا زیادہ اِن پر عمل ہو گا اتنا ہی حُسن ظاہر ہو گا ، کیونکہ عورت کا حُسن اس کی بے پردگی میں نہیں ، اُس کی بے لباسی میں نہیں ، وہاں تو صرف ظاہری اور وقتی جاذبیت ہوتی ہے جو عموماً نفسانی خواہشات و جذبات پر منحصر ہوتی ہے جو اُس خواہش یا جذبے کے ساتھ ساتھ رُخصت ہو جاتی ہے ، اور پھر وہی بے پردگی ، بے حیائی اور عُریانیت زدہ ''' حُسن '''جو اللہ کی نافرمانی کروا رہا ہوتا ہے بے کیف لگتا ہے اور ہوس کا مارے ہوئے کسی اور بے حیاء کی تلاش میں لگ جاتے ہیں ،
عورت کا اصل حُسن وہ ہے جو مرد کو ہمیشہ اُس کا گرویدہ کیے رکھے اور وہ حُسن اُسکی ''' حیاء ''' میں ہے ، جس کی کشش ، جس کا احترام ، جس کی جاذبیت ہر رشتے اور تعلق کے مطابق الگ الگ ہوتی ہے اور ہمیشگی والی ہوتی ہے ،

پس اِیمان والیاں اپنے اِس فطری حُسن کو اللہ کی تابع فرمانی میں نکھارتی رہتی ہیں ، اور اِیمان والے اُنکے مددگار ہوتے ہیں ((((( وَالمُؤمِنُونَ وَالمُؤمِنَاتُ بَعضُہُم أَولِیَاء بَعضٍ یَأمُرُونَ بِالمَعرُوفِ وَیَنہَونَ عَنِ المُنکَرِ وَیُقِیمُونَ الصَّلاَۃَ وَیُؤتُونَ الزَّکَاۃَ وَیُطِیعُونَ اللّہَ وَرَسُولَہُ أُولَـئِکَ سَیَرحَمُہُمُ اللّہُ إِنَّ اللّہَ عَزِیزٌ حَکِیمٌ ::: اور اِیمان والے اور اِیمان والیاں ایک دوسرے کے ساتھی ا ور مددگار ہیں (کہ) نیکی کا حُکم دیتے ہیں اور برائی سے منع کرتے ہیں اور نماز قائم کرتے ہیں اور زکوۃ اداکرتے ہیں اور اللہ اور اللہ کے رسول (صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم) کی اطاعت کرتے ہیں یہی ہیں جن پرجلد ہی اللہ رحم فرمائے گا بے شک اللہ بہت ہی زبردست اور حِکمت والا ہے ))))) سورت التوبہ / آیت71۔
لہذا ہر ایک اپنے اپنے اِیمان کی حالت اور اُس کی قوت اپنے اندر پائی جانے والی ''' حیاء ''' اور اُسکے بارے میں اپنے خیالات اور اپنے عمل کے ذریعے جان سکتا ہے ، کہ کون بے حیائی کو پسند کر کے خلافِ اِیمان کام کرنے والوں میں ہے اور کون با حیاء رہ کر نیکی اور خیر میں اپنے کلمہ گو بھائیوں بہنوں کا مدد گار ہے ، اللہ سب مسلمانوں کوسچا اِیمان والا بننے کی ہمت دے ، اور اس کی اور اسکے رسول صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی اتباع کرنے میں ایک دوسرے کا مددگار بنائے۔ و السلام علیکم ۔
عادل سہیل ظفر

صراط الہدی

No comments:

Post a Comment

السلام علیکم ورحمة الله وبرکاته

ښه انسان د ښو اعمالو په وجه پېژندلې شې کنه ښې خبرې خو بد خلک هم کوې


لوستونکودفائدې لپاره تاسوهم خپل ملګروسره معلومات نظراو تجربه شریک کړئ


خپل نوم ، ايمل ادرس ، عنوان ، د اوسيدو ځای او خپله پوښتنه وليکئ


طریقه د کمنټ
Name
URL

لیکل لازمی نه دې اختیارې دې فقط خپل نوم وا لیکا URL


اویا
Anonymous
کلیک کړې
سائیٹ پر آنے والے معزز مہمانوں کو خوش آمدید.



بحث عن:

البرامج التالية لتصفح أفضل

This Programs for better View

لوستونکودفائدې لپاره تاسوهم خپل معلومات نظراو تجربه شریک کړئ

MrAbohisham's Channel

هډه وال کے ایس ایم ایس اپنے موبائل میں حاصل کرنے کے لئے اپنا نمبر لکھ کرسائن اپ کردیں پھر آپ کے نمبر میں ایک کوڈ آے وہ یہاں لکھ لیں




که غواړۍ چی ستاسو مقالي، شعرونه او پيغامونه په هډاوال ويب کې د پښتو ژبی مينه والوته وړاندی شي نو د بريښنا ليک له لياري ېي مونږ ته راواستوۍ
اوس تاسوعربی: پشتو :اردو:مضمون او لیکنی راستولئی شی

زمونږ د بريښناليک پته په ﻻندی ډول ده:ـ

hadawal.org@gmail.com

Contact Form

Name

Email *

Message *

د هډه وال وېب , میلمانه

Online User